پی کے کے نصاب تعلیم میں تبدیلی لندن پلان کی پہلی کڑی ہے-خطیب جامعہ مسجد

گلگت 17 اکتوبر سوست ٹوڈے(پ ر)کے پی کے کے نصاب تعلیم میں تبدیلی لندن پلان کی پہلی کڑی ہے۔قادیانیوں اور سامراجیوں کی ملی بھگت سے عمران خان اور قادری نے سیرت نبوی اور خلفائے راشدین کے مضامین کو نصاب سے ختم کرکے مسلمانوں کے جذبات مجروح کئے ہیں جس کی جتنی بھی مذمت کریں کم ہے۔ان خیالات کا اظہار جمعیت علمائے اسلام گلگت کے سیکریٹری اطلاعات و خطیب جامعہ مسجد حضرت علی المرتضیٰ (رضی اللہ عنہ)مولانا رحمت اللہ سراجی نے جمعہ کے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہا کہ تعلیمی نصاب میں من مانیاں ہرگز قبول نہیں۔کے پی کے کی صوبائی حکومت سیرت البنیﷺ،صحابہ کرام(رضی اللہ عنہ)اور جہاد پر مبنی اسباق کو فی الفور دوبارہ شامل نصاب کریں۔ورنہ جمعیت علمائے اسلام سامراجی ایجنٹوں کو ملک سے بھاگانے پر مجبور ہونگے۔انہوں نے مذید کہا کہ ہم پورے ملک میں یکساں نظام اور یکساں نصاب تعلیم کا نفاذ چاہتے ہیں۔پاکستان اسلام کے نام پر حاصل کیا گیا ہے اس لئے اس ملک میں اسلام اور نظریہ پاکستان سے ہم آہنگ نصاب تعلیم وقت کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہا کہ عمران خان نصاب تعلیم سے سیرت النبی ،صحابہ کرام اور جہاد کے مضامین خارج کرکے کون سا نیا پاکستان بنا نا چاہتے ہیں۔وہ پاکستان کے معماروں کو سیکرلر بنانا چاہتا ہے۔نئی نسل کو گمراہی کے راستے پر ڈالنے اور قوم کے بچوں کو ناچ گانے کے عادی بنانے سے کوئی نیا پاکستا ن نہیں بنتا ہے۔اس بات پر سب کو اتفاق ہے کہ قوموں کی عروج و زوال میں نصاب تعلیم اور نظام تعلیم کا نمایاں کردار ہیں۔پڑھی لکھی اور باکردار قوم ہی تمام چیلنجز کا مردانہ مقابلہ کر سکتے ہیں۔پختون خواہ حکومت فوری طور پر نصاب تعلیم میں سیرت البنی،صحابہ کرام اور جہاد کے مضامین شامل کریں ورنہ جمعیت علمائے اسلام سخت مزاحمت کریں گی۔

 

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *