گلگت بلتستان میں پاکستان پیپلز پارٹی کے پانچ سال ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تحریر دلشاد ہادی

12پاکستان پیپلز پارٹی نے اپنے دور اقتدار میں جو ترقیاتی کام کئے وہ کسی سے ڈھکے چپے نہیں اپنے پانچ سالہ دور میں سید مھدی شاہ نے بحیثیت چیف منیسٹر گلگت بلتستان میں عوام کی فلاح و بہبود کے لئے جو کام کئے تھے ان کو نظر انداز کیا گیا ۔ گلگت بلتستان کے عوام کو اپنے گزشتہ دنوں میں جھانکنے کی ضرورت تھی مگر عوام نے ایسا نہیں کیا اور آنکھیں بند کر کے مختلف پارٹیوں کو آزمانے کی ٹھان لی۔ جس کی وجہ سے پاکستان پیپلز پارٹی کو انتہائی بری شکست ہوئی ۔سید مہدی شاہ بہ زات خود ایک انتہائی اچھے اور غریب پرور انسان ہونے کے ساتھ ساتھ خوش مزاج بھی ہیں ۔ کسی کے بھی دکھ درد اسے دیکھے نہیں جاتے ۔مگر چند مفاد پرست لوگ بھی اسی پارٹی کا حصہ بن کر پارٹی کو ڈسنے پر تلے ہوئے تھے ۔ جن کی وجہ سے عام عوام کی سید مھدی شاہ تک رسائی ممکن نہیں ہوئی ہزاروں ایسے غریب اور نادار لوگوں کو اس کے دروازے سے واپس بھیج دیا گیا جن کے ہر مسلے کے لئے جناب مہدی شاہ از خود اٹھ کر ہرآفس چلا جاتا ۔ مگر افسوس کہ ان لوگوں کو سید مھدی شاہ سے دور رکھا گیا ۔ اسی طرح پاکستان پیپلز پارٹی کے دور حکومت میں وہی مفاد پرست لوگ کرورڈ پتی بنے ۔ جن کے گھر ایک سائیکل تک نہیں تھا آج ان کے گھر کے دروازے پر لاکھوں کی کئی گاڑیاں کھڑی ہیں ۔ پیپلز پارٹی بدنام کرانے کیلئے کرپٹ ٹھکیداروں نے بھی کوئی کسر نہیں چوڑی ۔ جو ٹھکیدار کل تک بازار میں لوگوں سے اپنا منہ چھپا ئے پھرتے تھے آج ان کے پاس بھی گاڑیاں ہیں ۔ ہم پوچھتے ہیں ان سے ۔ کل تک مزدور اپنی مزدوری لینے کے لئے جن کے پیچھے پھرتے تھے ۔ ان کے پاس مزدوروں کو دینے کے لئے پیسے نہیں تھے آج گاڑی آئی ہے تو کہا ں سے آئی ۔یہ ساری کمائی کرپشن کی ہے ۔ جو آج پیپلز پارٹی کے نام کردیا جاتا ہے ۔ اور آج وہی کرپٹ ٹھکیدار اورمفاد پرست لوگ دوسری پارٹیوں میں جا کر پیپلز پارٹی پر انگلی اٹھاتے ہیں ۔ یاد رہے آج ان کی جو پہچان ہے وہ پاکستان پیپلز پارٹی کی دی ہوئی ہے ۔ آج جن لوگوں کے ساتھ ،، صاحب ،،کا لفظ استعمال ہوتا ہے توپاکستان پیپلز پارٹی کے بدولت پکارا جاتا ہے ۔ پیپلز پارٹی غریبوں کی پارٹی ہے اس بات سے کوئی انکار نہیں کر سکتا ۔ لیکن کچھ مفاد پرست لوگ غریبوں کے حقوق کے ساتھ ساتھ پارٹی کو بھی لے ڈوبے۔جس کی وجہ سے حالیہ الیکشن میں پارٹی کو سخت شکست کا سامنا ہوا ۔لوگ جس کا زمہ دار صوبائی قیادت کو ٹھراتے ہیں ۔اصل بات یہ نہیں قیادت بہت ہی اچھی تھی لیکن لوٹوں اور مفاد پرستوں نے پارٹی کو کمزور کردیا ۔پاکستان پیپلز پارٹی کے بدولت تین چار ہزار تنخواہ لینے والے آج بیس ہزار سے زیادہ تنخواہ لیتے ہیں سنکڑوں کونٹرکٹ ملازمین آج پکی نوکریا ں کر رہے ہیں ۔انکم سپورٹ پروگرام سے لاکھوں لوگ مستفید ہو رہے ہیں ۔ بلتستان ریجن کو کمشنری کے علاوہ نادرہ آفس پاسپورٹ آفس اور ایسے کئی ادارے جو بلتستان میں پہلے موجود نہیں تھے ان کا قیام عمل میں لایا گیا ۔ ابھی ن لیگ کی حکومت گلگت بلتستان کو کیا دیتی ہے یہ تو آنے والا وقت ہی بتائے گا ۔

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *