شگر کیلئے نئے ٹرانسفرمر اور ٹرانسمیشن لائن کی منصوبہ کھٹائی میں پڑ گیا

SHIGAR TRANSشگر(عابد شگری)شگر کیلئے نئے ٹرانسفرمر اور ٹرانسمیشن لائن کی منصوبہ کھٹائی میں پڑ گیا نئے ٹرانسمیشن لائن اور ٹرنسفرمروں کی تنصیف نہ ہونے کی وجہ سے فیزIIIکی دو میگاواٹ بجلی کی پیداوار کا عوام کو براہ راست فائدہ پہنچنے سے قاصرہیں۔تفصیلات کی مطابق سابقہ حکومت کے دور شگر میں نئے بجلی گھر کی تعمیر کے بعد اس کی ٹرانسمیشن لائن اورآٹھ ٹرانسفرمر ایک کڑور روپے مختص کیا ہوا تھا کہا جاتا کہ اس سکیم کیلئے فنڈ بھی منظور ہوا تھا اس کا پری کوالیفکیشن ہونے کے بعد ٹینڈر نہ ہوسکا ۔ذرائع کیمطابق اس سکیم کو بغیر کسی وجہ سے ختم کیا گیا ہے ۔جس سے فیز iiiکی افادیٹ ختم ہوگئی ہے ذرائع کیمطابق فیزiiiکی دو میگاواٹ پیداوار گھٹ کر صرف تیرہ سو کلوواٹ پر پہنچ چکا ہے۔جبکہ ٹرانسمیشن لائن اور ٹرانسفرمر کے نہ ہونے کی وجہ سے دوردراز علاقوں میں کوئی طرح نہیں پہنچ پاتا اور ضائع ہورہاہے۔کیونکہ موجودہ ٹرانسمیشن لائنز فیز iکی تین سو کلوواٹ کیلئے بجھائی گئی تھی جس کے بعد سے اپ گریڈ نہیں ہوا جبکہ فیزiiiکی پوری پیداوار اُٹھانے کی صلاحیت نہیں رکھتا۔جس کی وجہ سے شگر کے مختلف علاقوں میں بجلی کی لائٹ انتہائی مدھم جلتے ہیں ۔ ان ایریاز میں بجلی کے آلات وغیرہ استعمال نہیں کرسکتے۔ جس کی وجہ سے ان علاقوں کے صارفین کو سخت مشکلات کا سامنا ہیں ۔ جبکہ پہلے سے موجود ٹرانسفرمروں پر لوڈ بڑھ جانے کی وجہ سے اکثر ٹرانسفرمر جل چکے ہیں یا تو جلنے کے قریب ہیں۔ پیداوار کیمطابق بجلی کی ریوینیو حاصل نہ ہونے کی وجہ سے محکمہ برقیات کو بھی مالی نقصان اُٹھانا پڑرہا ہے۔

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *