جوٹیال کے عوام کو پانی کے حصول میں درپیش مشکلات کو مستقل بنیادوں پر حل کرنے کیلئے وزیراعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے پبلک پرائیوٹ پارٹنر شپ کے تحت جوٹیال کیلئے24کروڈ کے خطیر رقم کے میگا پراجیکٹ کی منظوری دی ہے

gilgit cityگلگت (پ ر)جوٹیال کے عوام کو پانی کے حصول میں درپیش مشکلات کو مستقل بنیادوں پر حل کرنے کیلئے وزیراعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے پبلک پرائیوٹ پارٹنر شپ کے تحت جوٹیال کیلئے24کروڈ کے خطیر رقم کے میگا پراجیکٹ کی منظوری دی ہے۔ واٹر سپلائی کے اس منصوبے پر بہت جلد باقاعدہ طورپر کام کا آغاز ہوگا اس منصوبے کی تکمیل سے جوٹیال میں پانی کا مسئلہ ہمیشہ کیلئے حل ہوگا۔ اسکے علاوہ وزیراعلیٰ نے ذوالفقار آباد کیلئے نا مکمل واٹر سپلائی سکیم کیلئے بھی درکار فنڈز کی منظوری دی ہے۔ ان منصوبوں سے جوٹیال کے تمام علاقوں میں پانی کی فراہمی یقینی ہوگی۔ وزیراعلیٰ سیکریٹریٹ سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ماضی میں جوٹیال اور کنوداس کے عوام کو پانی جیسے بنیادی سہولت سے محروم رکھا گیا۔ وزیراعلیٰ حافظ حفیظ الرحمن نے وزیراعلیٰ کا منصب سنبھالنے کے بعد ہی جوٹیال کے عوام کو پانی کے حوالے سے درپیش مسئلے کا نوٹس لیتے ہوئے محکمہ بلدیات کو پبلک پرائیوٹ پارٹنر شپ کے تحت جوٹیال کے عوام کیلئے پانی کا میگا پراجیکٹ تیار کرنے کیلئے ہدایت کی تھی۔ اس میگا پراجیکٹ کیلئے گلگت بلتستان ڈولپمنٹ ورکنگ پارٹی میں24 کروڈ کے خطیر رقم کی حتمی منظوری دی ہے۔ بپلک پرائیوٹ پارٹنر شپ کے اس منصوبے کی تکمیل اور ذوالفقار آباد پبلک پرائیوٹ پارٹنر شپ کے تحت نا مکمل منصوبوں کی تعمیر سے اپر جو ٹیال سمیت ذوالفقار آباد کے عوام کو پانی کے حوالے سے درپیش مسائل مستقل طور پرحل ہونگے۔ اسکے علاوہ وزیراعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے محکمہ تعمیرات کو جوٹیال کے واٹر پمپس کو بجلی کی سپیشل لائن کی فراہمی یقینی بنانے کیلئے بھی جلد کاغذی کاروائی مکمل کر کے متعلقہ فورم سے منظوری اور واٹر پمپس کو سپیشل بجلی کی فراہمی کیلئے اس منصوبے پر بھی جلد کام کا آغاز کرنے کی ہدایت کی ہے۔

وزیراعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے نوجوانوں کو روزگار کی فراہمی اور خود انحصاری کی راہ پر گامزن کرنے کیلئے وزیراعلیٰ خود روزگار سکیم کے تحت بلاسود قرضوں کی فراہمی کیلئے 40 کروڈ کے خطیر رقم کی منظوری دی ہے۔ واضع رہے کہ اخوت فاو نڈیشن کے تحت وزیراعلیٰ خود روز گار سکیم سے اب تک26,901 افراد مستفید ہوئے جنہوں نے بلاسود قرضوں سے اپنے کاروبار کا باقاعدہ آغاز کیا ہے جس سے انکی معاشی حالت میں بہتری آئی ہے۔ وزیراعلیٰ سیکریٹریٹ سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے بلاسود قرضوں کی افادیت اور عوام کی دلچسپی کو مدنظر رکھتے ہوئے وزیراعلیٰ بلاسود قرضوں کی حد20ہزار سے بڑھا کر70ہزار کی ہے آئندہ سال سے اس حد کو1لاکھ کرنے کی ہدایت کی ہے۔ وزیراعلیٰ بلاسود قرضوں کیلئے40کروڈ کے رقم کی منظوری سے ایسے کئی افراد گھریلو سطح پر چھوٹے صنعتوں کے قیام، پولٹری اور ڈیری فارم کا کاروبار کر کے معاشی طور پر مستحکم ہونگے اور انکی زندگی میں خوشحالی آئیگی۔

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *