ہر قوم پکارے گی، ہمارے ہیں حسین تحریر جمشیدخان دکھی و غلام عباس نسیم

mazameen sosttoday20نومبر 2016کے دن دوپہر2بجے ریوریا ہوٹل گلگت میں حلقہ ارباب ذوق (حاذ)کے زیر اہتمام ماہ محرم اور چہلم کے سلسلے میں ایک محفل مسالمہ منعقد ہوئی جس میں سینئر اور جونےئر شعرائے کرام کے علاوہ ڈاکٹر حمید بٹ،سینئر ایڈوکیٹ منیر احمد ،سابق ڈی ایس جہانگیر،اصغر علی قوم اور پرنٹ میڈیا کے احباب نے شرکت کی۔یہ محفل مسالمہ امام عالی مقام حضرت امام حسین ؑ کی عظیم قربانی کی یاد میں منظوم درود سلام کے ذریعے خراج عقیدت پیش کرنے کے لئے چہلم سے ایک روز قبل منعقد کی گئی تھی۔ بدقسمتی سے ہم مسلمانوں نے اہل بیت عظام اور صحابہ کرامؓ کو الگ الگ خانوں میں تقسیم کرکے نئے نئے مسائل کے دروازے کھول دئے ہیں جس کی وجہ سے آئے دن نت نئے مسائل جنم لے رہیں ہے۔ہم اہل بیت عظام اور صحابہ کرامؓ کے نعرے تو بہت لگاتے ہیں لیکن وہ عمل کرنے کے لئے تیار نہیں جو ان برگزیدہ ہستیوں نے انجام دیا۔ہم نے حضرت حسینؑ کو محض ایک بہادر جنگی سپہ سالار کے طور پر لیا ہے اور ان کے کار ہائے نمایاں کے تذکرہ پر ہی اکتفا کیا ہے۔
حالانکہ ان کی سیرت طیبہ کا ہر گوشہ ہمارے لئے مشعل را ہ ہے ۔ اگر ہمارے ملک میں رشوت کا بازار گرم ہے تو اس میں ملوث لوگوں کا تعلق یزید سے ہے۔اگر ہمارے علاقے میں فرقہ واریت کی لعنت موجود ہے اور ہم اسے تقویت پہنچار ہے ہیں تو کسی طرح بھی حسینی نہیں کہلا سکتے ۔اگر ہم مذہب کے نام پر بے گناہ لوگوں کا قتل عام کر رہے ہیں تو یقین کیجئے کہ ہم یزید کے آلہ کار ہیں اور حسینیت سے ہمارا دور کا بھی واسطہ نہیں۔اگر ہمارے واعظین یا مسندنشین لوگ فرقہ واریت کو ہوا دے رہے ہیں اور علاقے میں بدامنی پھیلانے کا ذریعہ بنتے ہیں تو ہمارا فرض ہے کہ ایسے لوگوں کی حوصلہ شکنی کریں کیونکہ حسینی مشن نفرتیں پھیلا نا نہیں بلکہ محبتیں پھیلانا ہے اور جو لوگ نفرتیں پھیلانے کاباعث بنتے ہیں توگویاوہ حسینؑ کے مشن سے انکار کر رہے ہیں۔حضرت علی ؑ سے کسی نے پوچھاکہ علم کیاہے؟آپ ؑ نے فرمایا ’’علم یہ ہے کہ اگر کوئی تم پر ظلم کرے تو اسے معاف کردو،اگر کوئی تعلقات توڑ دے توتم جوڑ دو، اگر کوئی تمھیں محروم کردے تو تم اسے نواز دو، بدلہ لینے کی طاقت کے باوجودمعاف کردو،خطاکار سامنے ہو تو سوچو اس کی خطا بڑی ہے یا تمھارا رحم۔‘‘ہم اپنے اعمال پر ذرا غور کریں کیا ہم میں یہ صفات موجود ہیں؟
محرم کا مقدس مہینہ مسلمانوں سے تقاضاکرتا ہے کہ دوسرے مہینوں کی نسبت اس مہینے میں ایک دوسرے سے زیادہ محبت اور اخوت کا مظاہرہ کریں جبکہ اس کے برعکس مسلمان سب سے زیادہ اس مہینے میں انتشار اور عدم رواداری کا شکار ہوتے ہیں جو ہماری اخلاقی پستی اور امام عالی مقام ؑ کی فرمودات سے انحراف کا منہ بولتا ثبوت ہے۔اگر ہم نے اپنے ان رویوں میں تبدیلی نہیں کی تو روز محشر امام عالی مقامؑ کو منہ دکھانے کے قابل نہیں ہوں گے۔لہذا ہمیں آپس میں دست گریبان ہونے کے بجائے باطل قوتوں کے خلاف متحدہونے کی ضرورت ہے۔احترام انسانیت کا جذبہ ہمارے دلوں میں موجزن ہو۔ایک دوسرے سے نفرت کرنے کے بجائے پیار و محبت اور وحدت کا اظہارکریں۔کیونکہ عمل کا یہی راستہ سنت شببیری کی شاہرا ہ کی طرف لے جاتاہے۔ اس موقع پرمعروف سینئر معالج ڈاکٹر عبدالحمید بٹ اپنے تاثرات بیان کرتے ہوئے حلقہ ارباب ذوق کے ادبی کردار کی تعریف کی۔ آپ نے کہاکہ عمر بھر کلام اقبال پڑھتا رہا لیکن آج مجھے پتہ لگا کہ ہماری سرزمین میں بھی کئی اقبال موجود ہیں۔اس موقع پر لیفیٹینٹ جنرل ڈاکٹر نجم ،قومی ہیروشاہ خان،جوہر نفیس کی وفات پر دلی تعزیت کا اظہار کیا گیا اورمرحومین کی ا رواح کے ایصال ثواب کے لیے فاتحہ خوانی کی گئی۔تناول ماحضرکے بعد یہ محفل اختتام پذیر ہوئی۔ذیل میں شعرائے کرام کا نمونہ کلام پیش خدمت ہے:

ہم حلقہ ارباب ذوق گلگت کی جانب سے معروف کوہ پیما حسن سد پارہ کی رحلت، دشمن کی گولہ باری سے شہید ہونے والے کیپٹن تیمور علی اور انکے ساتھیوں کی شہادت پر بھی خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے مرحومین کے لئے دعا ئے مغفرت کرتے ہیں۔خدا وند قدوس شہداء کے درجات بلند کرے اور پسماندگان کو صبر و جمیل عطا فرمائے۔اس موقع پر ہم حاذ کے معروف شاعر عبدالحفیظ شاکر اور بلتستان کے نامور قلم کار حشمت کمال الہامی کو اسلامی جمعیت طلبہ کی جانب سے ’’پروڈ آف پاکستان ایوارڈ‘‘ دینے پر مبارکباد دیتے ہیں۔

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *