ضلع ناظم چترال نے چترال میں دو ہفتوں کیلئے تمام قسم کے تہوار وغیرہ منانے پر پابندی لگادی۔

چترال(گل حماد فاروقی) ضلع ناظم چترال حاجی مغفرت شاہ نے ایک نوٹیفیکیشن نمبر 5144 کے تحت چترال اور مضافات میں تمام قسم کے Events یعنی میلے، تہوار یا کوئی ٹورنمنٹ منعقد کرنے پر پابندی لگادی ہے۔ ان کی دفتر سے جاری ونے والے اعلامیہ کے مطابق 21 اپریل کو چترال کے شاہی مسجد میں جب رشید نامی شحص نے نبوت کا جھوٹا دعوی کیا تھا جس کے نتیجے میں عوام نے احتجاج کیا اور 22 افراد پر دہشت گردی کے تحت مقدمہ درج ہوا جن کو ڈی آئی خان جیل لے گئے جن میں سے اکثر سڑک حادثے میں زحمی بھی ہوئے۔ اور لواری ٹاپ پر سرک حادچے میں 12 قیمتی جانوں کا ضائع ہونا بھی ایک بہت بڑا المیہ ہے ایسے حالات میں چترال میں پولو ٹورنمنٹ کرنا یا دیگر تہوار منانا مناسب نہیں ہے لہذا ان تمام ایونٹ یعنی کسی بھی قسم کی فیسٹیول، ٹورنمنٹ منانے پر دو ہفتے کیلئے پابندی لگادی گئی ہے۔
واضح رہے کہ چترال کی ضلعی انتظامیہ چترال پولو گراؤنڈ میں پولو ٹورنمنٹ منعقد کر رہے ہیں جبکہ دوسری طرف چترال کے ڈی پی او نے 22 افراد پر دہشت گردی کا دفعہ لگاکر ان کو ڈی آئی خان جیل بھیج دیا ہے جن کی ضمانت منگل کے روز بھی انسداد دہشت گردی کی عدالت سوات میں نہ ہوسکی۔انہوں نے مزید کہا کہ وہ حالات کو معمول پر لانے کی کوشش کررہے ہیں مگر ایسے خراب صورت حال میں پولو میچ کرانا مناسب نہیں ہوگا جس سے عوام میں مزید اشتعال پیدا ہوسکتا ہے۔

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *